غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟

غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟
وہ ساری عمر انتظار کرنے والے کیا ھُوئے؟

بہم ھوئے بغیر جو گذر گئیں ، وہ ساعتیں
وہ ایک ایک پل شمار کرنے والے کیا ھُوئے؟

دُعائے نیم شب کی رسم کیسے ختم ھو گئی ؟
وہ حرفِ جاں پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

کہاں ھیں وہ جو دشتِ آرزو میں خاک ھو گئے ؟
وہ لمحہ ابد شکار کرنے والے کیا ھُوئے؟

طلب کے ساحلوں پہ جلتی کشتیاں بتائیں گی
شناوری پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

”افتخار عارف“

Advertisements

Dukh Fasana Nahi Ke Tujh Se KaheN…….

Dukh fasana nahi ke tujh se kaheN
Dil Bhi Mana nahi k tujh se kaheN

Aaj tak apni bekali ka sabab
Khud bhi jana nahi k tujh se kaheN

Be tarah haal E dil hai aur tujh se
Dostana nahi k tujh se kaheN

Ek To harf E aashna tha magar
Ab zamana nahi k tujh se kaheN

Qasid hum faqeer logoN ka
Ab thikana nahi k tujh se kaheN

Ya khuda  dar E dil hai bakhshish dost
Aab O dana nahi k tujh se kaheN

Ab to apna is gali men ” Faraz “
Aana jana nahi k tujh se kaheN