کچھ نہیں آفتاب، روزن ہے

کچھ نہیں آفتاب، روزن ہے ساتھ والا مکان روشن ہے یہ ستارے چہکتے ہیں کتنے آسماں کیا کسی کا آنگن ہے؟ چاندنی ہے سفیر سورج کی چاند تو ظلمتوں کا مدفن ہے آگ ہے کوہسار کے نیچے برف تو پیرہن ہے، اچکن ہے دائمی زندگی کی ہے ضامن یہ فنا جو بقا کی دشمن ہے … More کچھ نہیں آفتاب، روزن ہے

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو سو رہے ہیں درد، ان کو مت جگاؤ، چُپ رہو   رات کا پتھر نہ پگھلے گا شعاعوں کے بغیر صبح ہونے تک نہ بولو ہم نواؤ ، چُپ رہو   بند ہیں سب میکدے، ساقی بنے ہیں محتسب اے گرجتی گونجتی کالی گھٹاؤ ، چُپ رہو   … More سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں   رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا پر ہوا خوب رائیگاں جاناں   میرے اندر ہی تو کہیں گم ھے کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں   عالم بیکراں میں رنگ ھے تو تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں   روشنی بھر گئی نگاہوں … More ہم کہاں اور تم کہاں جاناں