غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟

غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟
وہ ساری عمر انتظار کرنے والے کیا ھُوئے؟

بہم ھوئے بغیر جو گذر گئیں ، وہ ساعتیں
وہ ایک ایک پل شمار کرنے والے کیا ھُوئے؟

دُعائے نیم شب کی رسم کیسے ختم ھو گئی ؟
وہ حرفِ جاں پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

کہاں ھیں وہ جو دشتِ آرزو میں خاک ھو گئے ؟
وہ لمحہ ابد شکار کرنے والے کیا ھُوئے؟

طلب کے ساحلوں پہ جلتی کشتیاں بتائیں گی
شناوری پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

”افتخار عارف“

Advertisements

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو
سو رہے ہیں درد، ان کو مت جگاؤ، چُپ رہو

 

رات کا پتھر نہ پگھلے گا شعاعوں کے بغیر
صبح ہونے تک نہ بولو ہم نواؤ ، چُپ رہو

 

بند ہیں سب میکدے، ساقی بنے ہیں محتسب
اے گرجتی گونجتی کالی گھٹاؤ ، چُپ رہو

 

تم کو ہے معلوم آخر کون سا موسم ہے یہ
فصلِ گل آنے تلک اے خوشنواؤ ، چُپ رہو

 

سوچ کی دیوار سے لگ کر ہیں غم بیٹھے ہوئے
دل میں بھی نغمہ نہ کوئی گنگناؤ ، چُپ رہو

 

چھٹ گئے حالات کے بادل تو دیکھا جائے گا
وقت سے پہلے اندھیرے میں نہ جاو ، چُپ رہو

 

دیکھ لینا، گھر سے نکلے گا نہ ہمسایہ کوئی
اے مرے یارو، مرے درد آشناؤ ، چُپ رہو

 

کیوں شریک غم بناتے ہو کسی کو اے قتیلؔ
اپنی سولی اپنے کاندھے پر اُٹھاؤ ، چُپ رہو

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں

 

رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں

 

میرے اندر ہی تو کہیں گم ھے

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں

 

عالم بیکراں میں رنگ ھے تو

تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں

 

روشنی بھر گئی نگاہوں میں

ہو گئے خواب بے اماں جاناں

 

اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں

اب بھی ھے نیلا آسماں جاناں

 

ھے جو پر خوں تمہارا عکس خیال

زخم آئے کہاں کہاں جاناں

Aap Bahoot Sharif HaiN Aapne Kya Nahi Kiya….

Dil ne wafa k naam par kaar e wafa nahi kiya
khud ko halak kar diya khud ko fida nahi kiya  

Jane teri nahi k sath kitne hi jabr the k the
Maine tere lehaz men tera kaha nahi kya

Tu bhi kisi k baab men ahd shikan ho ghaleban
MaiN ne bhi ek shakhs ka  qzar ada nahi kya

Jo bhi ho tum per motariz usko yahi jawab do
Aap bahoot sharif haiN  aapne kya nahi kiya

Jis ko shaikh O shah ne hukm E khuda diya qarar
Humne nahi kya wo han bakhuda nahi kya

Nisbat e ilm hai bahoot hakim e waqt ko azieez
usne to kar e jehl bhi be olama nahi kiya

Kya Zamana Tha K Har Roz Mila Karte The….

Kya zamana tha k har roz mila karte the
Raat bhar chaNd k hamraah phira karte the

JahaaN tanhaaiyaaN sar phoR k so jati haiN
Un makaanoN meN ajab log raha karte the

Kar diya aaj zamaane ne unheN bhi majbur
Kabhi yeh log mere dukh ki dawa karte the

Dekh kar jo hamaiN chup chap guzar jata hai
Kabhi us shakhs ko hum pyar kiya karte the

IttefaaQaat E zamana bhi ajab haiN ‘Nasir’
Aaj woh dekh rahe haiN jo suna karte the

Kitnaa kaam kareNge……

Kitnaa kaam kareNge

Ab aaraam kareNge

Tere diye hue dukh

Tere naam kareNge

Ahal-E-dard hi aakhir

KhushiyaaN aam kareNge

Kaun bacha hai jise voh

Zer-E-daam kareNge

Naukri chhoR k ‘Nasir’

Apnaa kaam kareNge

Dukh Fasana Nahi Ke Tujh Se KaheN…….

Dukh fasana nahi ke tujh se kaheN
Dil Bhi Mana nahi k tujh se kaheN

Aaj tak apni bekali ka sabab
Khud bhi jana nahi k tujh se kaheN

Be tarah haal E dil hai aur tujh se
Dostana nahi k tujh se kaheN

Ek To harf E aashna tha magar
Ab zamana nahi k tujh se kaheN

Qasid hum faqeer logoN ka
Ab thikana nahi k tujh se kaheN

Ya khuda  dar E dil hai bakhshish dost
Aab O dana nahi k tujh se kaheN

Ab to apna is gali men ” Faraz “
Aana jana nahi k tujh se kaheN