غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟

غمِ جہاں کو شرمسار کرنے والے کیا ھُوئے؟
وہ ساری عمر انتظار کرنے والے کیا ھُوئے؟

بہم ھوئے بغیر جو گذر گئیں ، وہ ساعتیں
وہ ایک ایک پل شمار کرنے والے کیا ھُوئے؟

دُعائے نیم شب کی رسم کیسے ختم ھو گئی ؟
وہ حرفِ جاں پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

کہاں ھیں وہ جو دشتِ آرزو میں خاک ھو گئے ؟
وہ لمحہ ابد شکار کرنے والے کیا ھُوئے؟

طلب کے ساحلوں پہ جلتی کشتیاں بتائیں گی
شناوری پہ اعتبار کرنے والے کیا ھُوئے؟

”افتخار عارف“

Badlaa Na Apne Aap Ko Jo The Wohi…

 

Badlaa na apne aap ko jo the wohi rahe
Milte rahe sabhi se magar ajnabi rahe


Har waqt har maqaam pe haNsna mahaal hai
Rone ke waaste bhi koi be-kali rahe


Duniya na jeet paao to haaro na aap ko
ThoRi bahut to zehn me naaraazgi rahe


Apni tarah sabhi ko kisi ki talash thi
Hum jiske bhi qareeb rahe door hi rahe


Guzro jo baaGh se to dua maaNgte chalo
Jis me khile haiN phool wo daali hari rahe