A Blind Poem/ایک نابینا نظم

ایک نابینا نظم مری آنکھیں تبھی سے (میں جب دنیا میں میں آیئ تھی) روشنی نا آشنا تھیں میں اپنے ہاتھ کی واضح لکیروں کو بھی اب تک دیکھ نہ پایٔ مجھے بتلا دے جاناں ! چاند ہم سے دور ہے کتنا مجھے سمجھا کہ اسکی روشنی کا رنگ کیسا ہے مرے کپڑے پہنتے ہیں … More A Blind Poem/ایک نابینا نظم

ﮨﻢ ﻏﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﭼﺮﭼﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ/Hum Ghazal mein tera charcha nahi hone dete

ﮨﻢ ﻏﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﭼﺮﭼﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺭُﺳﻮﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺷﮩﺮﺕ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﻋﻈﻤﺘﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﺮﺍﻏﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﻢ ﮐﺴﯽ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺍُﺟﺎﻻ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﭽﮯ ﻣﮑﺎﻧﻮﮞ ﻭﺍﻟﮯ … More ﮨﻢ ﻏﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﭼﺮﭼﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ/Hum Ghazal mein tera charcha nahi hone dete

اب اداس پھرتے ہو سردیوں کی شاموں میں

اب اداس پھرتے ہو سردیوں کی شاموں میں اِس طرح تو ہوتا ہے اِس طرح کے کاموں میں اب تو اُس کی آنکھوں کے میکدے میّسر ہیں پھر سکون ڈھونڈو گے ساغروں میں جاموں میں دوستی کا دعویٰ کیا عاشقی سے کیا مطلب میں ترے فقیروں میں میں ترے غلاموں میں رائیگاں مسافت میں کون … More اب اداس پھرتے ہو سردیوں کی شاموں میں

میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں

میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں جو بھی ہونا ہے مجھے عشق میں جلدی ہو جاوں   زندگی چاک کی گردش کے سوا کچھ بھی نہیں میں اگر کوزہ گری چھوڑ دوں مٹی ہو جاوں   پھر سے لے جائے میری ذات سے تُو عشق ادھار اور میں پھر سے تیرے حسن … More میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں   رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا پر ہوا خوب رائیگاں جاناں   میرے اندر ہی تو کہیں گم ھے کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں   عالم بیکراں میں رنگ ھے تو تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں   روشنی بھر گئی نگاہوں … More ہم کہاں اور تم کہاں جاناں