ﮨﻢ ﻏﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﭼﺮﭼﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ/Hum Ghazal mein tera charcha nahi hone dete

ﮨﻢ ﻏﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﭼﺮﭼﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ
ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺭُﺳﻮﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺷﮩﺮﺕ ﺍﭘﻨﯽ
ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

ﻋﻈﻤﺘﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﺮﺍﻏﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ
ﮨﻢ ﮐﺴﯽ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺍُﺟﺎﻻ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﭽﮯ ﻣﮑﺎﻧﻮﮞ ﻭﺍﻟﮯ
ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺴﺎﺋﮯ ﮐﮯ ﻓﺎﻗﮧ ﻧﮩﯿﮟﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

ﺫﮐﺮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ  ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﮨﻢ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﺟﺰﯾﺮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺗﮭﮑﻨﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﯾﮧ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﺎ ﭘﮩﺎﮌ
ﻣﯿﺮﮮ ﺑﭽﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻮﮌﮬﺎ ﻧﮩﯿﮟﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ

معراج فیض آبادی

 

Hum Ghazal mein tera charcha nahi hone dete

Teri yadoN ko bhi ruswa nahi hone dete

kuch to humkhud bhi nahi chahte shohrat apni 

Aur kuch log bhi aisa nahi hone dete

AzmateiN apne chiraghoN ki bachane k liye

Hum kisi ghar mein ujala nahi hone dete

Aaj bhi gaoN mein kuch kachhe makano waloN 

  Ghar mein hamsaaye  ke faqa nahi hone dete

 Zikr karte hain tera naam nahi lete hain 

 Hum samandar ko jazeera nahi hone dete

Mujhko takhne nahi deta yeH zaroorat ka pahaar

 Mere bachhe mujhe boorha nahi hone dete

Meraaj Faizabadi

Advertisements

اب اداس پھرتے ہو سردیوں کی شاموں میں

اب اداس پھرتے ہو سردیوں کی شاموں میں
اِس طرح تو ہوتا ہے اِس طرح کے کاموں میں

اب تو اُس کی آنکھوں کے میکدے میّسر ہیں
پھر سکون ڈھونڈو گے ساغروں میں جاموں میں

دوستی کا دعویٰ کیا عاشقی سے کیا مطلب
میں ترے فقیروں میں میں ترے غلاموں میں

رائیگاں مسافت میں کون ساتھ چلتا ہے
سب ہی چھوڑ جاتے ہیں دو چار گاموں میں

زندگی بکھرتی ہے شاعری نکھرتی ہے
دل بروں کی گلیوں میں دل لگی کے کاموں میں

جس طرح شعیب اُس کا نام چُن لیا تم نے
اُس نے بھی ہے چُن رکھا ایک نام ناموں میں
شعیب بن عزیز

Mil hi jayega kaheen dil ko yaqeeN rahta hai…..

Mil hi jayega kaheen dil ko yaqeeN rahta hai
Wo isee shahr ki galiyoN men kaheeN rahta hai

 

Jis ki sansoN se mahakte the dar o baam tere
Aye makaN bol kahaN ab yeh makeeN rahta hai

 

Ek zamana tha k sab ek jagah rahte the
Aur ab koii kaheeN , koii kaheeN rahta hai

 

Roaz milne pe bhi lagta tha k jug beet gaye
Ishq men waqt ka ehsaas naheeN rahta hai

 


Dil fasurda to hua dekh k usko , lekin
Umr bhar kaun jawaN , kaun haseeN rahta hai

Ahmad Mushtaaq

میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں

میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں
جو بھی ہونا ہے مجھے عشق میں جلدی ہو جاوں

 

زندگی چاک کی گردش کے سوا کچھ بھی نہیں
میں اگر کوزہ گری چھوڑ دوں مٹی ہو جاوں

 

پھر سے لے جائے میری ذات سے تُو عشق ادھار
اور میں پھر سے تیرے حسن پہ باقی ہو جاوں

 

کوئی دم تُو میرے چہرے پہ خوشی بن کے ابھر
کوئی دم میں تیرے چہرے کی اداسی ہو جاوں

 

یا تو دریا میں بدل جاوں کہ لہریں اٹھیں
ہا بگولوں کاکہا مان لوں آندھی ہو جاوں

 

اس کی جانب سے کوئی ہجر مجھے آ کے لگے
اور میں معرکہ ء عشق میں زخمی ہو جاوں

 

جبر کی طرح کوئی جبر کروں اپنے ساتھ
کیوں نا کچھ دیر کو میں اپنے پہ حاوی ہو جاوں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں

 

رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں

 

میرے اندر ہی تو کہیں گم ھے

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں

 

عالم بیکراں میں رنگ ھے تو

تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں

 

روشنی بھر گئی نگاہوں میں

ہو گئے خواب بے اماں جاناں

 

اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں

اب بھی ھے نیلا آسماں جاناں

 

ھے جو پر خوں تمہارا عکس خیال

زخم آئے کہاں کہاں جاناں

Koyee Had Nahi Hai Kamal Ki..

Koyee had nahi hai kamaal ki
Koyee had nahi hai jamaal ki

Wahi qurb O door ki manzileN
Wahi sham khaab O khyaal ki

Na mujhe hi uska pata koyee
Na use khabar mere haal ki

Ye jawaab meri sada ka hai
K sada hai uske sawaal ki

Wo qayamateN jo guzar gayeeN
ThiN amanaten kayee saal ki

Ye namaaz E asr ka waqt hai
Ye ghari hai din k zawaal ki

Hai MONIR subh E safar nayee
Gayee baat shab k malaal ki

Aap Bahoot Sharif HaiN Aapne Kya Nahi Kiya….

Dil ne wafa k naam par kaar e wafa nahi kiya
khud ko halak kar diya khud ko fida nahi kiya  

Jane teri nahi k sath kitne hi jabr the k the
Maine tere lehaz men tera kaha nahi kya

Tu bhi kisi k baab men ahd shikan ho ghaleban
MaiN ne bhi ek shakhs ka  qzar ada nahi kya

Jo bhi ho tum per motariz usko yahi jawab do
Aap bahoot sharif haiN  aapne kya nahi kiya

Jis ko shaikh O shah ne hukm E khuda diya qarar
Humne nahi kya wo han bakhuda nahi kya

Nisbat e ilm hai bahoot hakim e waqt ko azieez
usne to kar e jehl bhi be olama nahi kiya