سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو
سو رہے ہیں درد، ان کو مت جگاؤ، چُپ رہو

 

رات کا پتھر نہ پگھلے گا شعاعوں کے بغیر
صبح ہونے تک نہ بولو ہم نواؤ ، چُپ رہو

 

بند ہیں سب میکدے، ساقی بنے ہیں محتسب
اے گرجتی گونجتی کالی گھٹاؤ ، چُپ رہو

 

تم کو ہے معلوم آخر کون سا موسم ہے یہ
فصلِ گل آنے تلک اے خوشنواؤ ، چُپ رہو

 

سوچ کی دیوار سے لگ کر ہیں غم بیٹھے ہوئے
دل میں بھی نغمہ نہ کوئی گنگناؤ ، چُپ رہو

 

چھٹ گئے حالات کے بادل تو دیکھا جائے گا
وقت سے پہلے اندھیرے میں نہ جاو ، چُپ رہو

 

دیکھ لینا، گھر سے نکلے گا نہ ہمسایہ کوئی
اے مرے یارو، مرے درد آشناؤ ، چُپ رہو

 

کیوں شریک غم بناتے ہو کسی کو اے قتیلؔ
اپنی سولی اپنے کاندھے پر اُٹھاؤ ، چُپ رہو

Hum zamane mein kuch aise bhatkay….

 

Kab talak shama’ jali, yaad naheeN
Sham-e-gham kaise dhali, yaad naheeN

Is qadar yaad hai apne the sabhi
Kisne kya chaal chali, yaad naheeN

Hum zamane mein kuch aise bhatkay
Ab to unki bhi gali yaad naheen

Abr tha, jaam tha, per aap na thay
Woh ghaRi kaise tali yaad naheeN

Kat gayi umr kisi tarh’  “Qateel”
Woh buri thee k bhali yaad naheeN

Kya ishq tha jo baa’as e ruswaayi ban gaya….

 

Kya ishq tha jo baa’as e ruswaayi ban gaya
Yaaro tamaam shahr  tamaashaayi ban gaya

Bin mange mil gaye meri aankhoN ko rat jaggay
MaiN jab say aik chand ka shaidaayi ban gaya

Dekha jo uska dast-e-hinaaee qareeb se
Ehsas goonjti hooyi shahnaayi ban gaya

Barham huaa tha meri kisi baat par koyi
Woh haadsa hi wajh-e-shanasayi ban gaya

Karta raha jo roz mujhay us say bad gumaan
Woh shakhs bhi ab usska tamannayi ban gaya

Woh teri bhi to pahli muhabbat na thi Qateel
Phir kya hoowa agar koyi harjaayi ban gaya