Rahti Thi Aankh Mein Jo Nami Khatm Ho Gayi/رہتی تھی آنکھ میں جو نمی، ختم ہو گئی

رہتی تھی آنکھ میں جو نمی، ختم ہو گئی
رسم دعاۓ نیم شبی، ختم ہوگئی

میرے بھی کچھ اصول تھے متروک ہو گئے
تیری کلاہ کی بھی کجی ،ختم ہو گئی

اب اور زندگی کا فسانہ سنائیں کیا
تنہا ہوئی ، اداس ہوئی، ختم ہو گئی

صحن چمن میں کون سبک گام آ گیا
باد صبا کی تیز روی، ختم ہو گئی

پچھلی رتوں کی چھاؤں نے اس کو بلا لیا
ایک مختصر سی ہم سفری ، ختم ہو گئی۔

آ جائیں میرے شہر سخن میں تمام لوگ
مژدہ! کہ انکی در بدری ختم، ہوگئی

غالب ایاز


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s