Kabhi Hum Khoobsurat the کبھی ہم بھی خوبصورت تھے ۔۔۔ ۔

کبھی ہم بھی خوبصورت تھے ۔۔۔ ۔۔۔

کتابوں میں بسی خوشبو کی صورت
سانس ساکن تھی!
بہت سے ان کہے لفظوں سے تصویریں بناتے تھے
پرندوں کے پروں پر نظم لکھ کر
دور کی جھیلوں میں بسنے والے لوگوں کو سناتے تھے
جو ہم سے دور تھے
لیکن ہمارے پاس رہتے تھے !
نئے دن کی مسافت
جب کرن کے ساتھ آنگن میں اترتی تھی
تو ہم کہتے تھے۔۔۔ ۔۔امی!
تتلیوں کے پر بہت ہی خوبصورت ہیں
ہمیں ماتھے پہ بوسا دو
کہ ہم کو تتلیوں کے‘ جگنوؤں کے دیس جانا ہے
ہمیں رنگوں کے جگنو‘ روشنی کی تتلیاں آواز دیتی ہیں
نئے دن کی مسافت رنگ میں ڈوبی ہوا کے ساتھ
کھڑکی سے بلاتی ہے

ہمیں ماتھے پہ بوسا دو

احمد شمیم

Kabhi Hum khoobsurat the.

kitabooN mein basi Khushboo ki Surat,
Saans sakin thi.
Bahoot se an-kahe lafzooN se tasveereN banate the.
ParindoN ke ParoN per nazm likh kar
Door ki jheeloN mein basne waloN Ko sunate the.
Jo hum se door the.
Lekin Humare pass rahte the.
Naye din ki musafat jab Kiran ke saath angaN mein utarti thi.
To hum kahte the…..Ammi !!
TitliyoN ke par Bahoot hi khoobsurat hain.
Humein maathe pe bosa do.
Ke humko TitliyoN k , JugnuoN ke des Jana hai.
Humein rangoN ke jugnu, Roushni ki titliyaN awaaz deti hain.
Naye din ki musafat rung mein doobi ,hawa ke sath
Khirki se Bulati hai.
Humein maathe pe bosa do.

Ahmad Shameem


3 thoughts on “Kabhi Hum Khoobsurat the کبھی ہم بھی خوبصورت تھے ۔۔۔ ۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s