Ras Mein Dooba Huaa, Lahraya Badan, Kya Kahna- رس میں ڈوبا ہوا لہرایا بدن ———— کیا کہنا

رس  میں  ڈوبا  ہوا لہرایا بدن ———— کیا  کہنا 

کروٹیں لیتی ہوئی صبحِ چمن ————- کیا کہنا

باغِ جنت پہ گھٹا ———- جیسے برس کر کھل جائے 

یہ  سہانی  تری خوشبوئے بدن ———— کیا کہنا

روپ سنگیت نے  دھارا ہے ——— بدن کا یہ رچاؤ

تجھ پہ لہلوٹ ہے بے ساختہ پن ——— کیا کہنا 

جیسے لہرائے ——- کوئی شعلہ بدن کی یہ لچک

سربسر  آتشِ  سیالِ  بدن  ————– کیا  کہنا

جس طرح جلوۂ فردوس ——– ہواؤں سے چھنے 

پیرہن  میں  ترے  رنگینئ تن ———-  کیا  کہنا

جلوہ  و  پردہ  کا  یہ  رنگ ————- دمِ نظارہ

جس طرح ادھ کھلے گھونگھٹ میں  دلہن،  کیا کہنا

 

چشمِ مخمور — صراحی بہ بغل —– جام بہ کف

نغمۂ  حافظِ  شیراز بدن ————— کیا  کہنا

زلفِ شبگوں کی چمک —– پیکرِ سیمیں کی دمک 

دیپ مالا ہے سرِ گنگ و جمن ———– کیا کہنا 

(فراق گورکھپوری)


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s