Tamam ILm Tere Hain Hunar Bhi Tere Hain…..

تمام علم تیرے ہیں ہنر بھی تیرے ہیں
ہر ایک گاؤں تیرا ہے شہر بھی تیرے ہیں
عبادتوں میں گزاری جو رات تیری ہے
جو غفلتوں میں کٹے وہ سحر بھی تیرے ہیں
تیرے کمال کا ادنی سا یہ کرشمہ ہے
کہ آبشار بھی تیرا ہنر بھی تیرے ہیں
علامتوں میں بیاں کی حقیقتیں اپنی
کلیم تیرا ہے اور خضر بھی تیرے ہیں
ہم آدمی ہی نہیں نیک و بد کے سنگم ہیں
تمام خیر ہیں تیرے تو شر بھی تیرے ہیں
اسی لیۓ تو میری مختلف صفاتیں ہیں
کہ رحمتیں ہیں تری تو قہر بھی تو تیرے ہیں
یہ چلتے پھرتے نظر آ رہے ہیں آدم زاد
جو زیر خاک ہوۓ وہ بشر بھی تیرے ہیں
ہم اپنی راہ سے باسط بھٹک گئے کیسے
کہ راستے بھی تیرے راہبر بھی تیرے ہیں
عبدالباسط
Tamam ilm tere hain hunar bhi tere hain
Har ek gaun tera hai  Shahr bhi tere hain
Ibadaton men  guzari jo raat ,teri hai
Jo ghaflatoN kate wo sehr bhi tere hain
     Tere kamal ka adna sa ye karishma hai
          Ke aabshar bhi tera hunar bhi tere hain
AlamtoN men bayaN ki haqiqateN Apni
Kalim tera hai Aur khizar bhi tere hain
  Hum aadmi hi nahi neak o bad k sangam hain
  Tamam khair hain tere to shar bhi tere hain
Isi liye to meri mokhtalif Sifaten hain
Ke rahmaten hain teri to qahar bhi tere hain
   ye chalte phirte nazar aarahe hain aadam zaad
Jo zeir e khak hue wo bashar bhi tere hain
Hum apni rah se” Basit ” bhatak gaye kaise
Ke Raaste bhi tere Rahbar bhi tere hain

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s