Pakistani Ghazal

کچھ نہیں آفتاب، روزن ہے

کچھ نہیں آفتاب، روزن ہے
ساتھ والا مکان روشن ہے

یہ ستارے چہکتے ہیں کتنے
آسماں کیا کسی کا آنگن ہے؟

چاندنی ہے سفیر سورج کی
چاند تو ظلمتوں کا مدفن ہے

آگ ہے کوہسار کے نیچے
برف تو پیرہن ہے، اچکن ہے

دائمی زندگی کی ہے ضامن
یہ فنا جو بقا کی دشمن ہے

یاد تارِ نفس پہ چڑیا ہے
وحشتوں کا شمار دھڑکن ہے

بھیگتا ہوں تمھاری یادوں میں
خط تمھارا مجھے تو ساون ہے

دیکھتا ہوں بچھڑنے والوں کو
خواب گویا کہ دور درشن ہے

نخلِ گُل ہو کسی کا مجھ کو کیا
مجھ کو تو خار و خس ہی گلشن ہے

تک رہا ہوں جہاں کو حیرت سے
مجھ میں جاگا یہ کیسا بچپن ہے

آپ مجھ کو ہی ڈھونڈتے ہوں گے
سب سے پتلی مری ہی گردن ہے

ہنس دیے میری بات سن کر وہ
مُسکرا کر کہا کہ بچپن ہے

احمدؔ اپنی مثال آپ ہوں میں
ہاں مِرا شعر، میرا درپن ہے

محمد احمدؔ

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو

سسکیاں لیتی ہوئی غمگین ہواؤ، چُپ رہو
سو رہے ہیں درد، ان کو مت جگاؤ، چُپ رہو

 

رات کا پتھر نہ پگھلے گا شعاعوں کے بغیر
صبح ہونے تک نہ بولو ہم نواؤ ، چُپ رہو

 

بند ہیں سب میکدے، ساقی بنے ہیں محتسب
اے گرجتی گونجتی کالی گھٹاؤ ، چُپ رہو

 

تم کو ہے معلوم آخر کون سا موسم ہے یہ
فصلِ گل آنے تلک اے خوشنواؤ ، چُپ رہو

 

سوچ کی دیوار سے لگ کر ہیں غم بیٹھے ہوئے
دل میں بھی نغمہ نہ کوئی گنگناؤ ، چُپ رہو

 

چھٹ گئے حالات کے بادل تو دیکھا جائے گا
وقت سے پہلے اندھیرے میں نہ جاو ، چُپ رہو

 

دیکھ لینا، گھر سے نکلے گا نہ ہمسایہ کوئی
اے مرے یارو، مرے درد آشناؤ ، چُپ رہو

 

کیوں شریک غم بناتے ہو کسی کو اے قتیلؔ
اپنی سولی اپنے کاندھے پر اُٹھاؤ ، چُپ رہو

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں

 

رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں

 

میرے اندر ہی تو کہیں گم ھے

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں

 

عالم بیکراں میں رنگ ھے تو

تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں

 

روشنی بھر گئی نگاہوں میں

ہو گئے خواب بے اماں جاناں

 

اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں

اب بھی ھے نیلا آسماں جاناں

 

ھے جو پر خوں تمہارا عکس خیال

زخم آئے کہاں کہاں جاناں

Koyee Had Nahi Hai Kamal Ki..

Koyee had nahi hai kamaal ki
Koyee had nahi hai jamaal ki

Wahi qurb O door ki manzileN
Wahi sham khaab O khyaal ki

Na mujhe hi uska pata koyee
Na use khabar mere haal ki

Ye jawaab meri sada ka hai
K sada hai uske sawaal ki

Wo qayamateN jo guzar gayeeN
ThiN amanaten kayee saal ki

Ye namaaz E asr ka waqt hai
Ye ghari hai din k zawaal ki

Hai MONIR subh E safar nayee
Gayee baat shab k malaal ki

Aap Bahoot Sharif HaiN Aapne Kya Nahi Kiya….

Dil ne wafa k naam par kaar e wafa nahi kiya
khud ko halak kar diya khud ko fida nahi kiya  

Jane teri nahi k sath kitne hi jabr the k the
Maine tere lehaz men tera kaha nahi kya

Tu bhi kisi k baab men ahd shikan ho ghaleban
MaiN ne bhi ek shakhs ka  qzar ada nahi kya

Jo bhi ho tum per motariz usko yahi jawab do
Aap bahoot sharif haiN  aapne kya nahi kiya

Jis ko shaikh O shah ne hukm E khuda diya qarar
Humne nahi kya wo han bakhuda nahi kya

Nisbat e ilm hai bahoot hakim e waqt ko azieez
usne to kar e jehl bhi be olama nahi kiya

Aayey kuchh abr, kuchh sharaab aayey..

Aayey kuchh abr, kuchh sharaab aayey
Us k baad aayey jo azaab aayey

Baam-e-meena se maahtaab utray
Dast-e-saaqi meiN aaftaab aayey

Har rag-e-jaaN meiN phir chiraaGhaaN ho
Saamney phir wo baynaqaab aayey

Kar raha tha Gham-e-jahaaN ka hisaab
Aaj tum yaad bayhisaab aayey

Jal uThay bazm-e-Ghair k darbaaN
Jab bhi ham KhaanumaaN Kharaab aayey

Faiz thi raah sar basar manzil
Ham jahaaN pahuNchey kaamyaab aayey

Deakh zamane ka Dastoor……

Deakh zamane ka dastoor

Tu mujh se mai tujh se door

Tanha tanha tanha phirte hai

Dil viraN aankheN be Noor

Dost bicharte jate hain

Shauq liye jate door

Hum apna ghum bhool gaye

Aaj kise dekha majboor

Dil ki dharkan kahti hai

Aaj koye aaye ga zaroor

Koshish lazim hai peyare

Aage jo usko manzoor

Suraj doob chala :Nasir:

Aur abi hai manzil door